Surah kahf


Surah kahf 
The 18th Surah of the Holy Quran which was revealed in Mecca. In it, the story of Companions of the Cave, Hazrat Khidr (peace be upon him) and Dhul-Qarnain is narrated.
Name
The name of this surah is derived from the ninth verse of the first ruku, “Az Awi al-Fatiyyah al-Khaf”. It means that the Surah in which the word Kahf occurs.

The time of descent
From here begins the surahs that were revealed in the third period of Makkah’s life. Makki life is divided into four major periods, the details of which have been covered in the article of Surah Inam. According to this division, the third period starts from the beginning of about 5 Prophets and lasts until about 10 Prophets.

What distinguishes this period from other periods is that in the second period, the Quraish used most of the ridicule, mockery, objections, accusations to suppress the Prophet Muhammad (peace be upon him) and his movement and congregation. , had relied on intimidation, intimidation and hostile propaganda, but in this third period they used the weapons of persecution, beatings and economic pressure with full rigor until a large number of Muslims left the country

Surah kahf 

Surah kahf 

and exiled them. had to leave and the rest of the Muslims and with them the Prophet himself and his family were surrounded by Shi’a-e-Abi Talib and their complete economic and social boycott was made. However, during this period, two figures — -Abu Talib and Umm al-Mu’minin Hazrat Khadijah (RA) were those who, due to their personal influence, the two major families of Quraish were supporting the Prophet (PBUH).

10 As soon as the eyes of the Prophet were closed, this period ended and the fourth period began in which the life of Makkah was made difficult for the Muslims until finally all the Muslims, including the Prophet, had to leave Makkah. 

By considering the text of Surah Kahf, it is estimated that it must have been revealed at the beginning of the third period, when persecution and resistance had intensified, but the migration of Abyssinia had not yet occurred. The story of the Companions of the Cave was narrated to the Muslims who were being persecuted at that time so that they would gain courage and know what the believers had done before to save their faith.
Topic and subject
This surah was revealed in response to the three questions of the polytheists of Makkah that they put before the Prophet, upon the advice of the People of the Book, to test him.

Who were the Companions of the Cave? What is the truth of the story of Khizr? And what is the story of Dhul-Qarnain? These three stories were related to the history of Christians and Jews. There was no discussion of them in Hijaz, that is why the People of the Book chose them for the purpose of testing to find out whether Muhammad (peace and blessings of Allah be upon him) really had an occult source of knowledge or not.

But Allah Ta’ala not only gave full answers to their questions with the language of His Prophet, but also completely attached the three stories asked by them to the situation that was faced between disbelief and Islam in Makkah at that time. was:

It was said about the Companions of the Kahf that they were convinced of the monotheism that this Qur’an is calling for and their condition was no different from the condition of a handful of oppressed Muslims in Makkah and the behavior of their people was no different from the behavior of the disbelieving Quraysh.

Then he gave a lesson to the people of faith through this story that if the dominance of the infidels is immense and a believer is not being given time to breathe in a cruel society, even then he should not bow down to falsehood, but to Allah. The body should be left on the trust.

In this connection, he also told the infidels of Makkah that the story of the Companions of the Cave is a proof of the validity of the belief in the Hereafter. Just as God resurrected the Companions of the Cave after they had been put to death for a long period of time, in the same way, the resurrection after death is not far from His power, which you refuse to believe.
Taking a way out of the story of the Companions of the Cave, the conversation started on the oppression and humiliation

that the chiefs and the people of Makkah were treating with the small nine Muslim community of their town. In this regard, on the one hand, the Prophet (peace and blessings of Allah be upon him) was instructed not to make any reconciliation with these oppressors and not to give importance to these great people compared to his poor companions. On the other hand, these nobles have been advised not to indulge in the luxuries of their few days of life, but to seek those good things which are eternal and lasting.

In the same series of words, the story of Khidr and Musa was narrated in such a way that it was an answer to the questions of the disbelievers and a consolation for the believers. The lesson that is actually given in this story is that because the interests on which the factory of Allah’s will is running are hidden from your eyes, you wonder why this happened. It was very angry! However, if the veil is lifted, you will know for yourself that what is happening here is going well, and what appears to be evil, is ultimately for a good outcome.

After that, the story of Dhul-Qarnain is narrated and in it the questioners are given a lesson that you are puffing up on your petty chieftainships even though Dhul-Qarnain is such a great ruler and such a great conqueror and the owner of such great means.

He had not forgotten his reality and was always submissive to his creator. Also, that you consider the spring of your few mansions and gardens to be eternal, but even after building the most stable protection wall in the world, he believed that the real trust is in Allah and not this wall. As long as Allah wills, this wall will stop the enemies and when His will is something else, there will be cracks and crevices in this wall.
There will be nothing left.

In this way, after completely reversing the test questions of the disbelievers, in the end of the speech, the same things that were said in the beginning of the speech are repeated, that is, that monotheism and the Hereafter are absolute truths, and your own good lies in that. Believe them, reform yourself according to them, and live in the world holding yourself accountable to God. If you don’t do this, your own life will be ruined and everything you do will be ruined.

قرآن مجید کی 18 ویں سورت جو مکہ میں نازل ہوئی۔ اس میں اصحاب کہف، حضرت خضر علیہ السلام اور ذوالقرنین کا قصہ بیان کیا گیا ہے۔
نام
اس سورت کا نام پہلے رکوع کی نویں آیت “اذ اوی الفتیۃ الی الکھف” سے ماخوذ ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ وہ سورت جس میں کہف کا لفظ آیا ہے۔

زمانۂ نزول
یہاں سے اُن سورتوں کا آغاز ہوتا ہے جو مکی زندگی کے تیسرے دور میں نازل ہوئی ہیں۔ مکی زندگی کو چار بڑے بڑے دوروں میں تقسیم کیا گیا ہے جن کی تفصیل سورۂ انعام کے مضمون میں گذر چکی ہے۔ اس تقسیم کے لحاظ سے تیسرا دور تقریباً 5 نبوی کے آغاز سے شروع ہو کر قریب قریب 10 نبوی تک چلتا ہے۔ اس دور کو جو چیز دوسرے ادوار سے ممتاز کرتی ہے وہ یہ ہے کہ دوسرے دور میں تو قریش نے نبی آخر الزماں محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اور آپ کی تحریک اور جماعت کو دبانے کے لیے زیادہ تر تضحیک، استہزاء،

اعتراضات، الزامات، تخویف، اطماع اور مخالفانہ پروپیگنڈے پر اعتماد کر رکھا تھا مگر اس تیسرے دور میں انہوں نے ظلم و ستم، مار پیٹ اور معاشی دباؤ کے ہتھیار پوری سختی کے ساتھ استعمال کیے یہاں تک کہ مسلمانوں کی ایک بڑی تعداد کو ملک چھوڑ کر حبش کی طرف نکل جانا پڑا اور باقی ماندہ مسلمانوں کو اور ان کے ساتھ خود نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اور آپ کے خاندان کو شِعبِ ابی طالب میں محصور کرکے ان کا مکمل معاشی اور معاشرتی مقاطعہ کر دیا گیا تاہم اس دور میں دو شخصیتیں —ابو طالب اور ام المؤمنین

حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا—- ایسی تھیں جن کے ذاتی اثر کی وجہ سے قریش کے دو بڑے خاندان نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی پشت پناہی کر رہے تھے۔ 10 نبوی میں دونوں کی آنکھیں بند ہوتے ہی یہ دور ختم ہو گیا اور چوتھا دور شروع ہوا جس میں مسلمانوں پر مکے کی زندگی تنگ کردی گئی یہاں تک کہ آخر کار نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سمیت تمام مسلمانوں کو مکہ سے نکل جانا پڑا۔

سورۂ کہف کے مضمون پر غور کرنے سے اندازہ ہوتا ہے کہ یہ تیسرے دور کے آغاز میں نازل ہوئی ہوگی جبکہ ظلم و ستم اور مزاحمت نے شدت تو اختیار کرلی تھی مگر ابھی ہجرتِ حبشہ واقع نہیں ہوئی تھی۔ اس وقت جو مسلمان ستائے جا رہے تھے ان کو اصحابِ کہف کا قصہ سنایا گیا تاکہ ان کی ہمت بندھے اور انہیں معلوم ہو کہ اہل ایمان اپنا ایمان بچانے کے لیے اس سے پہلے کیا کچھ کرچکے ہیں۔
موضوع اور مضمون
یہ سورت مشرکین مکہ کے تین سوالات کے جواب میں نازل ہوئی جو انہوں نے نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کا امتحان لینے کے لیے اہل کتاب کے مشورے سے آپ کے سامنے پیش کیے تھے۔ اصحاب کہف کون تھے؟ قصۂ خضر کی حقیقت کیا ہے؟ اور ذوالقرنین کا کیا قصہ ہے؟ یہ تینوں قصے مسیحیوں اور یہودیوں کی تاریخ سے متعلق تھے۔ حجاز میں ان کا کوئی چرچا نہ تھا، اسی لیے اہل کتاب نے امتحان کی غرض سے ان کا انتخاب کیا تھا تاکہ یہ بات کھل جائے کہ واقعی محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے پاس کوئی غیبی ذریعۂ علم

ہے یا نہیں۔ مگر اللہ تعالٰیٰ نے صرف یہی نہیں کہ اپنے نبی کی زبان سے ان کے سوالات کا پورا جواب دیا بلکہ ان کے اپنے پوچھے ہوئے تینوں قصوں کو پوری طرح اُس صورت حال پر چسپاں بھی کر دیا جو اس وقت مکہ میں کفر و اسلام کے درمیان درپیش تھی:

اصحابِ کہف کے متعلق بتایا کہ وہ اُسی توحید کے قائل تھے جس کی دعوت یہ قرآن پیش کر رہا ہے اور ان کا حال مکے کے مٹھی بھر مظلوم مسلمانوں کے حال سے اور ان کی قوم کا رویہ کفار قریش کے رویے سے کچھ مختلف نہ تھا۔ پھر اسی قصے سے اہل ایمان کو یہ سبق دیا کہ اگر کفار کا غلبہ بے پناہ ہو اور ایک مومن کو ظالم معاشرے میں سانس لینے تک کی مہلت نہ دی جا رہی ہو، تب بھی اس کو باطل کے آگے سر نہ جھکانا چاہیے بلکہ اللہ کے بھروسے پر تن بتقدیر نکل جانا چاہیے۔

اسی سلسلے میں ضمناً کفار مکہ کو یہ بھی بتایا کہ اصحاب کہف کا قصہ عقیدۂ آخرت کی صحت کا ایک ثبوت ہے۔ جس طرح خدا نے اصحاب کہف کو ایک مدت دراز تک موت کی نیند سلانے کے بعد پھر جلا اٹھایا، اسی طرح اُس کی قدرت سے وہ بعث بعد الموت بھی کچھ بعید نہیں ہے جسے ماننے سے تم انکار کر رہے ہو۔
اصحاب کہف کے قصے سے راستہ نکال کر اس ظلم و ستم اور تحقیر و تذلیل پر گفتگو شروع کردی گئی جو مکے کے سردار اور کھاتے پیتے لوگ اپنی بستی کی چھوٹی سی نو مسلم جماعت کے

ساتھ برت رہے تھے۔ اس سلسلے میں ایک طرف نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کو ہدایت کی گئی کہ نہ ان ظالموں سے کوئی مصالحت کرو اور نہ اپنے غریب ساتھیوں کے مقابلے میں ان بڑے بڑے لوگوں کو اہمیت دو۔ دوسری طرف ان رئیسوں کو نصیحت کی گئی ہے کہ اپنے چند روز عیشِ زندگانی پر نہ پھولو بلکہ ان بھلائیوں کے طالب بنو جو ابدی اور پائیدار ہے۔

اسی سلسلۂ کلام میں قصۂ خضر و موسیٰ کچھ اس انداز سے سنایا گیا کہ اس میں کفار کے سوالات کا جواب بھی تھا اور مومنین کے لیے سامان تسلی بھی۔ اس قصے میں دراصل جو سبق دیا گیا ہے وہ یہ ہے کہ اللہ کی مشیت کا کارخانہ جن مصلحتوں پر چل رہا ہے وہ چونکہ تمہاری نظر سے پوشیدہ ہیں اس لیے تم بات بات پر حیران ہوتے ہو کہ یہ کیوں ہوا؟ یہ تو بڑا غضب ہوا! حالانکہ اگر پردہ اٹھا دیا جائے تو تمہیں خود معلوم ہوجائے کہ یہاں جو کچھ ہو رہا ہے ٹھیک ہو رہا ہے اور بظاہر جس چیز میں برائی نظر آتی ہے، آخر کار وہ بھی کسی نتیجۂ خیر ہی کے لیے ہوتی ہے۔

اس کے بعد قصۂ ذوالقرنین ارشاد ہوتا ہے اور اس میں سائلوں کو یہ سبق دیا جاتا ہے کہ تم اپنی اتنی ذرا ذرا سی سرداریوں پر پھول رہے ہو حالانکہ ذوالقرنین اتنا بڑا فرمانروا اور ایسا زبردست فاتح اور اس قدر عظیم الشان ذرائع کا مالک ہو کر بھی اپنی حقیقت کو نہ بھولا تھا اور اپنے خالق کے آگے ہمیشہ سرِ تسلیم خم رکھتا تھا۔ نیز یہ کہ تم اپنی ذرا ذرا سی حویلیوں اور باغیچوں کی بہار کو لازوال سمجھ بیٹھے ہو، مگر وہ دنیا کی سب سے زیادہ مستحکم دیوارِ تحفظ بنا کر بھی یہی سمجھتا تھا کہ اصل بھروسے کے لائق اللہ ہے نہ کہ یہ دیوار۔ اللہ کی مرضی جب تک یہ دیوار دشمنوں کو روکتی رہے گی اور جب اس کی مرضی کچھ اور ہوگی تو اس دیوار میں رخنوں اور شگاف
وں کے سوا کچھ نہ رہے گا۔
اس طرح کفار کے امتحانی سوالات کو انہی پر پوری طرف الٹ دینے کے بعد خاتمۂ کلام میں پھر انہی باتوں کو دہرا دیا گیا ہے جو آغاز کلام میں ارشاد ہوئی ہیں، یعنی کہ توحید اور آخرت سراسر حق ہیں اور تمہاری اپنی بھلائی اسی میں ہے کہ انہیں مانو، ان کے مطابق اپنی اصلاح کرو اور خدا کے حضور اپنے آپ کو جوابدہ سمجھتے ہوئے دنیا میں زندگی بسر کرو۔ ایسا نہ کرو گے تو تمہاری اپنی زندگی خراب ہوگی اور تمہارا سب کچھ کیا کرایا اکارت جائے گا۔

Tags:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Related Post